قومینمایاں

یہ وہ حکومت ہے جو اپنی ہر بات سے مکر جاتی ہے

وزیراعلیٰ سندھ کی جھا نگارا باجارا میں میڈیا سے گفتگوکے دوران ایک صحافی کے سوال پر انہوں نے کہا کہ ہم لوگوں کی خدمت کرتے ہیں ہمارے لئے ایک ایک منٹ اہم ہے، یہ وہ حکومت ہے جو اپنی ہر بات سے مکر جاتی ہے یہ وہ لوگ ہیں جنہوں نے کہا تھا خودکشی کر لیں گے آئی ایم ایف کے پاس نہیں جائیں گےانہوں یہ بھی کہا تھا کہ اگر مہنگائی ہوتی ہے تو مطلب ہے حکمران سارے چور ہیں،یہ کتنی بار پیپلز پارٹی کی حکومت ختم کرچکے ہیں اور کتنی بار مجھے جیل بھیج چکے ہیں،ان کی باتوں پر دھیان نہیں دینا،جو عوامی مسائل میڈیا کے ذریعہ سامنے آتے ہیں ہم انہیں حل کرنے کی کوشش کرتے ہیں ہم ان کی بات ایک کان سے سن کر دوسرے کان سے نکال لیتے ہیں
انہوں نے مزید کہا کہ چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو کی سربراہی میں عوامی خدمت کا سفر جاری ہے سندھ کے لوگوں نے پیپلزپارٹی کو ہمیشہ ووٹ دیا ہے،2018 الیکشن میں سب سے زیادہ سیٹیں ملیں، جب تک لوگوں کا اعتماد ہے کوئی کچھ نہیں بگاڑ سکتا آئی جی تکراری ہے، سندھ کابینہ نے متفقہ طور پر آئی جی کو ہٹانے کا فیصلہ کیا ہے وزیراعظم نے بھی آئی جی کو ہٹانے کے لیے اتفاق کیا
دوسرے صوبوں میں چوبیس گھنٹے کے اندر افسران تبدیل ہوجاتے ہیں افسوس ہے وفاقی حکومت سندھ کے لوگوں کو الگ نظر سے دیکھ رہی ہے کوآرڈینیشن نہ ہونے کی وجہ سے بدامنی پھیلی ہے رکن سندھ اسمبلی اور ایک صحافی کا قتل ہوا ہےان واقعات میں جو بھی ملوث ہے اس کو پکڑنا پولیس کا کام ہے، آئی جی پولیس کے سربراہ ہیں، پولیس میں لیڈر شپ نہیں کہ یہ کام کر سکے
جب ملک کی عوام بے روزگاری اور مہنگائی کے طوفان تلے دبے ہوئے ہیں،اپوزیشن لیڈر کا ملک میں ہونا ضروری ہے،
اپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی کے حالیہ اجلاس میں موجود نہیں تھےچیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے پاکستان کے عوام کی نمائندگی کرتے ہوئے قومی اسمبلی میں حقیقتیں بتائیں عوامی مسائل سامنے لانے پر بلاول بھٹو زرداری کی کردار کشی کی گئی،ذاتیات پر حملے کیے گئے
ایک موقع پر وزیراعلیٰ سندھ نے کہاکہ جب شہید ذوالفقار علی بھٹو کو حکومت ملی تو معاشی حالات بالکل خراب تھے اس کے باوجود وہ عوام میں خوشحالی لے کر آئے جب موجودہ حکمرانوں کو کہا جاتا ہے کہ عوامی مسائل ہیں تو وہ برا بھلا کہنا شروع کردیتے ہیں۔
ایسی مہنگائی اور ا یسے حالات حالات پاکستان کی تاریخ میں کبھی نہیں ہوئےانڈس ہائی وے کی تعمیر کلیئے سندھ حکومت نے 7 ارب روپے 17 اپریل 2017 کو وفاقی حکومت کو دیے تین سال گزرنے کے باوجود ابھی تک روڈ مکمل نہیں ہو سکا
سندھ حکومت کے 7 ارب روپے سے روڈ کی تعمیر کا کام شروع ہواروڈ کی تکمیل کے لیے کئی بار وفاق کو خطوط لکھے ہیں سی سی اء میں معاملہ اٹھایا ہے، وفاقی حکومت کی تاخیر کے سبب انڈس ہائی وے پر سینکڑون لوگوں کی جانیں گئی ہیں۔

Tags
Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
Close
Close