میرا کراچینمایاں

گھر کو سب جیل قرار دینے کے معاملے پر سندھ ہائی کورٹ ہوم سیکریٹری پر برہم

پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما اعجاز جکھرانی کےکزن عباس جکھرانی کے گھر کو سب جیل قرار دینے کے معاملے پر سندھ ہائی کورٹ نے ہوم سیکریٹری پر اظہارِ برہمی کیا ہے اور سوال کیا ہے کہ کیا جیل میں بند دیگر قیدیوں کے گھروں کو بھی سب جیل قرار دیا جاسکتا ہے؟

سیکریٹری داخلہ نے سماعت کے دوران عدالت کو بتایا کہ ہم نے محکمۂ داخلہ کا جواب عدالت میں جمع کر دیا ہے۔

عدالت نے ان سے استفسار کیا کہ اس جواب میں تفصیلات کہاں ہیں؟ کتنی ایف آئی آر کاٹی گئیں؟

عدالت نے ہوم سیکریٹری عثمان چاچڑ پر اظہارِ برہمی کرتے ہوئے چیف سیکریٹری سندھ سے کہا کہ آپ نے سنا کہ سیکریٹری داخلہ سندھ کیا کہہ رہے ہیں؟

چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ احمد علی ایم شیخ نے کہا کہ چاچڑ صاحب! ہمیں سب پتہ ہے،ہمیں وزیرِ اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کی سربراہی میں ہونے والی میٹنگ کے بارے میں بھی سب پتہ ہے،بہت دھیان سے ہمیں اپنا جواب جمع کروائیں۔

چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ نے استفسار کیا کہ کیا ہر وہ قیدی جس سے اس کی ماں بھی ملاقات نہیں کر سکتی اسے گھر میں نظر بند نہ کر دیا جائے؟

عدالت نے سیکریٹری داخلہ سے سوال کیا کہ کیا آپ کو پتہ ہے کہ کراچی کی جیل میں کتنے قیدی ہیں؟ کیا انہیں حق نہیں ہے کہ ان کے گھر کو بھی سب جیل قرار دیا جائے۔

سرکاری وکیل نے عدالت کو بتایا کہ عباس جکھرانی کا گھر سب جیل قرار دینے کے لیے وزیرِ اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کو درخواست دی گئی تھی، عباس جکھرانی کے کزن نور جاکھرانی کو قتل کیا گیا تھا۔

عدالت نے دریافت کیا کہ ایسے کتنی درخواستیں وزیرِ اعلیٰ سندھ نے منظور کی ہیں؟

عدالت میں دائر کی گئی درخواست میں کہا گیا ہے کہ ملزم پر ضمنی ریفرنس میں آمدن سے زائد اثاثوں اور بے نامی جائیداد کا الزام ہے۔

Tags
Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
Close
Close